کیا صرف امریکی فوجی نکلے ہیں یا امریکا بھی نکل گیا ہے افغانستان سے؟

Geo News Urdu
Geo News Urdu
  • 602
  • 27
  • 33

کیا صرف امریکی فوجی نکلے ہیں یا امریکا بھی نکل گیا ہے افغانستان سے؟

#GeoNews #Jirga
مشہور مقولہ ہے جو صدیوں سے زیر استعمال ہے کہ جس کا کام اسی کو سا جائے لیکن پاکستان میں المیہ یہ ہے کہ جس کا جو کام ہوتا ہے وہی تو نہیں کرتا لیکن دوسروں کے کاموں میں ہر وقت ٹانگ اڑاتا رہتا ہے اس کا ایکسپرٹ بننے کا بھی تاثر دیتا رہتا ہے. دوسرا المیہ پھر ہمارے پاکستانی میڈیا کا ہے. مہذب اور ڈویلپ دنیا میں یہ ہوتا ہے کہ جو جس سبجیکٹ کے ایکسپرٹس ہوتے ہیں وہ اسی سبجیکٹ پہ بولنے کے لیے بلائے جاتے ہیں یا وہ اسی پہ بولتے ہیں. لیکن ہمارے میڈیا المیہ یہ ہے کہ چند زبان دراز بلکہ کسی حد تک بدتمیز قسم کے جو سیاستدان ہوتے ہیں تمام جماعتوں میں ان کو روز اکھٹا کیا جاتا ہے اور پھر اکانومی کا ایشو ہو تو اس پہ بھی وہ بات کرتے ہیں فارن پالیسی کے ایشو پہ بھی وہی لوگ بات کرتے ہیں. انٹرنل سیکیورٹی کے معاملات پہ بھی وہ لوگ بات کرتے ہیں. اور پھر حقیقت یہ ہوتی ہے کہ ان جیسے ایشوز سے ان کا کوئی سروکار عملا ہوتا بھی نہیں ہے اور ان کی نہ وہ انڈرسٹینڈنگ ہوتی ہے نہ وہ سپیشلٹی ہوتی ہے. جس کا نتی یہ نکلا ہے کہ افغانستان کا ایشو ہو پاک انڈیا ریلیشنز کا ایشو ہو پاک یو ایس ریلیشن شپ کا ایشو ہو پاک چین ریلیشن شپ کا ایشو ہو یا انٹرنل سیکیورٹی کے ایشوز ہو سب پہ پاکستانی قوم روزانہ ٹاک شوز دیکھنے کے باوجود مزید سے مزید کنفیوز ہوتی جا رہی ہے. اب اس ملک کا یہاں تک معاملہ پہنچ گیا ہے کہ اس ملک کے وزیراعظم صاحب کہتے ہیں کہ جی ایبسلوٹلی نارتھ میں اڈے نہیں دوں گا اڈے انکار کر دیا ہے. بعد میں پتہ چلتا ہے کہ نہ کسی امریکی عہدیدار نے ان سے بات کی ہے نہ ان سے وہ ڈیمانڈ کیا ہے. آج ہماری ایک خوش قسمتی ہے کہ امریکہ میں مقیم ایک پاکستانی سکالر مجھے ہاتھ آگئے ہیں اور جو کہ سٹینٹفرڈ یونیورسٹی میں پڑھاتے ہیں اور ایکسپرٹ ہیں اور لکھتے ہیں بولتے ہیں تحقیق کرتے ہیں وہاں کے لیے آہ یو ایس افغان ریلیشن پہ اور یو ایس پاکستان ریلیشن پہ یا کاؤنٹ کی جو پالیسی ہے امریکہ کی اور ابھی تک ان کے سینکڑوں مضامین القاعدہ سے متعلق طالبان سے متعلق یو ایس پالیسی ٹورز پاکستان سے متعلق یو ایس پالیسی ٹوورڈ طالبان اینڈ افغانستان سے متعلق وہ شائع ہو چکے ہیں. تو ناظرین میرے ساتھ موجود ہیں ڈاکٹر اسفندیار میر صاحب بہت شکریہ میر صاحب. سر مجھے پہلے یہ نقطہ سمجھا دیجیے کہ صرف امریکی فوجی نکلے ہیں افغانستان سے یا کہ امریکہ بھی افغانستان سے ہے. جی بہت شکریہ سلیم صافی صاحب دیکھیں یہ آہ بات یہاں پہ بھی ڈیبیٹ ہو رہی ہے میں ابھی افغانستان سے ہو کے آ رہا ہوں وہاں پہ بھی یہ ڈیبیٹ ہو رہی ہے کہ امریکہ اتنی عجلت میں یہاں سے کیوں نکل گیا ہے اور آہ میں آپ سے بھی یہی کہوں گا اور میں نے افغانستان میں اپنے انٹرویوٹرز کو بھی یہ بات کہی کہ امریکہ بالکل عجلت میں نہیں نکلا اور آہ اگر آپ امریکہ کی پچھلے چند سالوں کی گرینڈ سٹریٹیجک تھنکنگ یا ان کی نیشنل سیکیورٹی پرائرٹیز کو آپ سٹڈی یا آپ ان کو دیکھیں. آہ تو امریکہ اس خطے سے آہ ٹیرریزم کے خلاف جنگ سے اپنے آپ کو ڈس انگیج کرنا چاہ رہا تھا اور اس کی اس کی دو تین آہ مختلف آہ عوامل ہیں. آہ سب سے پہلی وجہ یہ ہے کہ وہ آہ ان نائن الیون وارز کو بائیں لارج امریکہ کی جو نیشنل سیکیورٹی اسٹیبلشمنٹ ہے وہ ایک فیلیئر اور ایک طرح کا ڈسٹریکشن سمجھتی ہے ان کو لگتا ہے کہ آہ رجیمز جو انہوں نے تبدیل کیں پہلے افغانستان میں اس کے بعد عراق میں آہ وہ ایک آئیڈیا نہیں تھا. آہ اس کے نتیجے میں جو ان کو سٹیٹ بلڈنگ کرنے کی ان کو جو کوشش آہ کرنا پڑی وہ ان کا پراجیکٹ بائے لاج فیل ہوا ہے. آہ ان کو یہ بھی لگتا ہے کہ جو ٹیرریزم کا تھریٹ تھا وہ کچھ حد سے زیادہ انفلیٹ ہو گیا ان کا جو کاؤنٹر ٹیرریزم مشن ہے وہ بہت زیادہ پھیل گیا بڑھ گیا یہاں تک کہ ان کے لیے اس کو پھر مینیج کرنا مشکل ہو گیا. اور جو تیسری بڑی وجہ ہے جو ان کی گرینڈ سٹڈیز ایک تھنکنگ میں آہ جس کی وجہ سے میں کہوں گا کہ یہ یہ شفٹ آہ میں آیا ہے وہ ہے چائنہ کا رائس. آہ آئی تھنک امریکہ کو یہ لگتا ہے امریکی پالیسی میکرز جو ان کے پروفیشنل آہ نیشنل سیکیورٹی کے لوگ ہیں کہ چائنہ نے اس عرصے میں امریکہ جب ڈسٹریکٹڈ تھا ان ان آہ جنگوں سے چائنہ نے بہت گین کیا ہے اس نے اپنی ملٹری کو بہت حد تک ماڈرنائز کیا ہے. آہ اور جس کی وجہ سے ان کو خاصہ نقصان اٹھانا پڑا ہے. آہ یہ جو آہ فیصلہ ہوا ہے پریزیڈنٹ بائیڈن نے کیا اس میں یہ سٹریٹیجک تھنکنگ آہ اس نے ایک بڑا رول ادا

Posted 2 months ago in Politics